عاشور کی سحر ہے اکبر کی اذاں ہے
شبیر کے لشکر میں اک شورِ فغاں ہے
عاشور کی سحر ہے اکبر کی اذاں ہے

سب بستہ غازی ہیں مولا کی امانت میں
انصارِ شاہِ دیں ہیں مصروف عبادت میں
سجدے میں دعا کرتی اکبر تیری ماں ہے
عاشور کی سحر ہے ۔۔۔۔۔

کیا سوگ کا عالم تھا شبیر کے لشکر میں
ماں کہتی تھی لائوں گی اکبر کی دُلہن گھر میں
معلو م نہ تھا ان کی قسمت میں سِناں ہے
___________________________________________________
عاشور سے ہر صبح کی آ غوش میں
اب تک معصوم کی تاسیرِ بیاں گونج رہی ہے
اسلام کی وادی میں آواز ہی اے لوگ
شبیر کے اکبر کی اذاں گونج رہی ہے
___________________________________________________

آوازِ اذاں پہنچی جس وقت مدینے میں
صغریٰ نے کہا کوئی حسرت نہیں سینے میں
مجھے اتنا یہ بتا دے بھائی توں کہاں ہے
عاشور کی سحر ہے ۔۔۔۔۔

دم توڑتے اکبر نے بابا سے کہا رو کر
صغریٰ کو بتا دینا سہرا نہ بندھا سر پر
برچھی ہے کلیجے میں اور خشک زباں ہے
عاشور کی سحر ہے ۔۔۔۔۔
_________________________________________________

اٹھارہ برس پال کے جس کو جواں کیا
زینب کے سامنے وہ ہی دم توڑنے لگا
زینب نے سر کو پیٹ کے لاشے سے یہ کہا
اکبر نہیں گیا میرے سینے سے دل گیا
___________________________________________________

زینب کے یہ نالے تھے لاشِ علی اکبر پر
اٹھارہ برس میں نے پالا تھاتجھے اکبر
میں دھوپ میں بیٹھی ہوں اور اشک رواں ہے
عاشور کی سحر ہے ۔۔۔۔۔


ashoor ki sehr hai akbar ki azaan hi
shabbir ke lashkar may ek shor-e-fugha hai
ashoor ki sehr hai akbar ki azaan hi

sab basta ghazi hai maula ki amanat may
ansar-e-shahedeen hai masroof ibadat may
sajday may dua karti akbar teri maa hai
ashoor ki sehr hai....

kya sog ka aalam tha shabbir ke laskhar may
maa kehti thi laaungi akbar ki dulhan ghar may
maloom na tha inki kismat may sina hai

___________________________________________________
ashoor se har subhe ki aaghosh may
ab tak masoom ki taaseer-e-bayaan goonj rahi hai
islam ki waadi my aawaz hi ay log
shabbir ke akbar ki azaan goonj rahi hai
___________________________________________________

awaaz-e-azaan pahunchi jis waqt madine may
sughra ne kaha koi hasrat nahi senay may
mujhe itna ye bata de bhaai tu kahan hai
ashoor ki sehr hai....

dum todte akbar ne baba se kaha rokar
sugra ko bata dena sehra na bandha sar par
barchi hai kalaije may aur khusk zaban hai
ashoor ki sehr hai....

___________________________________________________
athara baras  paal ke jis ko jawaan kiya,
zainab ke saamne wohi dam todne laga
zainab ne sar ko peet ke laashay se ya kaha,
akbar nahi gaya mere seenay se dil gaya
___________________________________________________

zainab ke ye naalay thay laashay ali akbar par
athara baras paala tha tujhe akbar
mai dhoop may baithi hoo, aur ashk rawaan hai
ashoor ki sehr hai....
Noha - Aashoor Ki Sehar Hai

Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online