آرام کہاں ہائے ہائے آرام کہاں
دشتِ عالم میں زینب کو بھلا، آرام کہاں

قتل شبیر بھی عباس بھی اکبر بھی ہوئے
کٹ گئے عون و محمد کے بھی مقتل میں گلے
لاشئہ ابنِ حسن ہو گیا پامالِ جفا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

تیر جب اصغرِ معصوم کی گردن پہ لگا
دیتی تھی خیمے کے در پہ کھڑی بانو یہ صدا
بن تیرے چین ملے کیسے میرے مہلکا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

چھِد گئی مشقِ سکینہ لبِ دریا صد افسوس
بے کفن خاک پہ ہے شیر کا لاشہ افسوس
پیاسے بچوں کا کوئی چاہنے والا نہ رہا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

چھِن گئی سر سے ردا جل گیا اسباب تمام
بعدِ شبیر نمودار ہوئی کیسی یہ شام
خون کانوں سے بہا بچی کا دامن بھی جلا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

سر شہیدوں کے سرِ نوکِ سِناں قید حرم
اک دو کا نہیں سینے میں بہتر کا ہے غم
بیڑیاں پہنے ہوئے لاغر و بیمار چلا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

کوئی مارا گیا تلوار سے نیزے سے کوئی
لاش مقتل میں کسی دولہا کی پامال ہوئی
ہو گئے بازوئے عباسِ علمدار جُدا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

رورو کہتی ہے سکینہ میرے عموں آئو
مجھکو ماریں نہ لعیں آ کے انہیں سمجھائو
کیوں نہیں سُنتے ہو دیتی ہوں تمہیں کب سے صدا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

قافلہ جاتا ہے اب شام کے بازاروں میں
چلتے ہیں اہلِ حرم ظلم کے انگاروں میں
ہر قدم ہوتی ہے بیمار پر اک تازہ جفا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

بچے جو خاک پہ گرتے ہیں کُچل جاتے ہیں
غم سے دل مائوں کے سینے سے نکل جاتے ہیں
کوئی سُنتا نہیں بیوائوں کی فریاد و بُقا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔

آنکھ روتی ہے قلم لکھتا ہے نوحہ ریحان
ہے کرم مجھ پہ شاہِ کرب و بلا کا ریحان
نوحہ جب تک نہ لکھوں روز شاہِ دیں کا نیا
آرام کہاں ۔۔۔۔۔


aaram kahan haye haye aaram kahan
dashte aalam may zainab ko bhala, aaram kahan

qatl shabbir bhi abbas bhi akbar bhi huve
kat gaye aun-o-mohamad ke bhi maqtal may galay
laasha-e-ibne hassan ho gaya paamale jafa
aaram kahan....

teer jab asghar-e-masoom ki gardan pe laga
deti thi qaime ke dar pe khadi bano ye sada
bin tere chain mily kaise mere mahelakha
aaram kahan....

chid gayi mashke sakina labe darya afsos
be-kafn khaak pe hai sher ka laasha afsos
pyase bachon ka koi chahne wala na raha
aaram kahan....

chin gayi sar se rida jal gaya asbaab tamaam
bade shabbir na-mudaar huvi kaisi ye shaam
khoon kano se baha bachi ka daman bhi jala
aaram kahan....

sar shaheedo ke sare nauke sina qaid haram
ek do ka nahi seene may bahattar ka hai gham
bediyan pehne huve laaghiro beemar chala
aaram kahan....

koi maara gaya talwar se naize se koi
laash maqtal may kisi dulha ki pamaal hui
hogaye bazu-e-abbase alamdar juda
aaram kahan....

ro ro kehti hai sakina mere ammu aao
mujko maare na layeen aake inhe samjhao
kyun nahi sunte ho deti hoo tumhe kabse sada
aaram kahan....

qafela jaata hai aab shaam ke baazaro may
chalte hai ahle haram zulm ke angaro may
har kadam hoti hai beemar par ek taaza jafa
aaram kahan....

bache jo khaak pe girte hai kuchal jaate hai
gham se dil maa-on ke seene se nikal jaate hai
koi sunta nahi bewaon ki faryad-o-buka
aaram kahan....

aankh roti hai qalam likhta hai noha rehaan
hai karam mujhpe shahe karbobala ka rehaan
nowha jab tak na likhoo roz shahe deen ka naya
aaram kahan....
Noha - Aaram Kahan
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nasir Zaidi
Download Mp3
Listen Online