آئو ہم کریں یہ شہ کا ماتم
اے حسینیو

مجلسِ عزا جہاں ہوئی ہے
وہ مکاں ارم سے کم نہیں ہے
دیکھ کر یہ بولے چاند تارے
ہر حسیں جگہ سے یہ حسیں ہے
سچے دل سے جو آئے گا یہاں
دل کی آرزو پائے گا یہاں
شہ کے غم میں کر لو آنکھیں پُرنم
اے حسینیو
آئو ہم کریں ۔۔۔۔۔

تشنہ لب سکینہ کی سبیلیں
کس حسیں طرح سے یہ سجی ہیں
آج بھی مشک و علم کی نسبت
چچا اور بھتیجی سے جُڑی ہے
شہد سے شیریں اس کا ذائقہ
ہر مرض کی ہے بس یہی دوا
یہ عزا ہے زخمی دل کا مرہم
اے حسینیو
آئو ہم کریں ۔۔۔۔۔

ماتمی جلوس شاہِ دیں کا
پرچمِ عباس ہے نگہباں
عصمتِ علم کے واسطے تم
کر دو اپنے جان و دل کو قرباں
زہرا کی دُعا وہ شخص پائے گا
اونچا ہی رہے گا اپنا پرچم
اے حسینیو
آئو ہم کریں ۔۔۔۔۔

ہرعمل سے اونچا ہو گیا یہ
شہ کے غم میں جو اشک بہے ہیں
اشکِ غم ہیں موتیوں کی مانند
کاکنی رومال میں سجے ہیں
ذکرِ حسین غم شدہ بھی ہے
غم میں مبتلا انبیائ بھی ہیں
جی اصول دیں کا ہے یہ غم
اے حسینیو
آئو ہم کریں ۔۔۔۔۔

فرشِ غم جہاں جہاں بچھا ہے
عرش کے فرشتے بھی وہیں ہیں
کرتے ہیں نبی بھی آہ و زاری
جانی اس کی زینبِ حزیں ہیں
ماتمی یہاں مرتضیٰ بھی ہیں
نوحہ گو یہاں فاطمہ بھی ہیں
ہے بڑی پُر نور مجلسِ غم  
اے حسینیو
آئو ہم کریں ۔۔۔۔۔

نوحہ مرثیہ کی یہ صدائیں
گونجتی ہیں جب کبھی فضا میں
پاتا ہے سکوں مضطرب دل
ذکرِ شاہِ دیں کی دیا میں
ہے عزائے شاہ حق کا راستہ
آ کے تم یہاں مانگ لو دُعا
شہ کا نام لیتے رہو ہر دم
اے حسینیو
آئو ہم کریں ۔۔۔۔۔

مجلس و ماتم میں رات بھر جو
جاگتی رہتی ہیں جن کی آنکھیں
عرشِ آفتاب سے منور
حشر میں ہوتی ہیں اُن کی آنکھیں
احمدو محسن کی یہ صدا ہے
دونوں کی اس غم سے ہی بقا ہے
کرتے ہیں نوحہ یہ دونوں بہم
اے حسینیو
آئو ہم کریں ۔۔۔۔۔


aao hum karein ye sheh ka matam
ay hussainiyo

majlise aza jahan hui hai
wo makan irum se kam nahi hai
dekh kar ye bole chand taare
har haseen jagah se ye haseen hai
sache dil se jo aayega yahan
dil ki aarzoo payega yahan
sheh ke gham may karlo aankhein purnam
ay hussainiyo
aao hum karein....

tashnalab sakina ki sabeele
kis haseen tarhe se ye saji hai
aaj bhi mashk o alam ki nizbat
chacha aur bhatiji se judi hai
shehed se shireen iska zaaeqa   
har maraz ki hai bas yehi dawa
ye aza hai zakhme dil ka marham
ay hussainiyo
aao hum karein....

matami juloos shahe deen ka
parcham e abbas hai nigehban
ismat e alam ke waaste tum
kardo apne jaan o dil ko qurban
parchame ghazi jo uthayega
zehra ki dua wo shaks payega
uncha hi raehga apna parcham
ay hussainiyo
aao hum karein....

har amal se ooncha ho gaya ye
sheh ke gham may jo ashk bahe hai
ashk e gham hai motiyon ke maanid
kaakni rumaal may sajay hai  
zakire hussain gham shuda bhi hai
gham may mubtila ambiya bhi hai
ji usool deen ka hai ye gham   
ay hussainiyo
aao hum karein....

farshe gham jahan jahan bicha hai
arsh ke farishte bhi wahin hai
karte hai nabi bhi aah o zaari
jaani iski zainabe hazeen hai    
matami yahan murtuza bhi hai
nauhago yahan fathema bhi hai
hai badi pur noor majlise gham
ay hussainiyo
aao hum karein....

nauha marsiya ki ye sadayein
goonjti hai jab kabhi faza may
paata hai sukoon muztarib dil
zikre shahe deen ki diya may   
hai aza e shah haq ka raasta
aake tum yahan maanglo dua
sheh ka naam lete raho har dam
ay hussainiyo
aao hum karein....

majlis o matam may raat bhar jo
jaagti rehti hai jinki aankhein
arshe aaftab se munawer
hashr may hoti hai unki aankhein
ahmed o mohsin ki ye sada hai
dono ki is gham se hi baqa hai
karte hai naha ye dono baham
ay hussainiyo
aao hum karein....
Noha - Aao Hum Karein
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Mir Mohsin Ali
Download Mp3
Listen Online