آنکھیں ترس گئیں ہیں اکبر کے دیکھنے کو
علی اکبر علی اکبر

لیلیٰ کے لب پہ ہر دم رہتا تھا ایک نالہ
وہ تھا تو اس کے دم سے گھر میں تھا اک اجالا
آنکھیں ترس گئیں ہیں

اٹ جائیں گے وہ گیسو خاک میں لہو میں
یہ دن بھی دیکھنے تھے سہرے کی آرزو میں
آنکھیں ترس گئیں ہیں

پھر عید آئی سب نے پہنے نئے لبادے
آئے ہیں پلٹ کر امت کے شہزادے
آنکھیں ترس گئیں ہیں

خورشید سا وہ چہرہ رنگت میں تھا سنہرا
پلکوں کی چلمنوں پر تھا ابرو کا پہرہ
آنکھیں ترس گئیں ہیں

سنتے ہیں اس کا چہرہ سب خوں میں بھر گیا تھا
کہتے ہیں اس کے دل میں نیزہ اتر گیا تھا
آنکھیں ترس گئیں ہیں

زینب سے ہو کے رخصت جب رن کو وہ چلا تھا
ہر کوئی بڑھ کے اس کے ماتھے کو چومتا تھا
آنکھیں ترس گئیں ہیں


aankhein taras gayi hai akbar ke dekhne ko
ali akbar ali akbar

laila ke lab pe har dam rehta tha ek naala
wo tha to us ke dam se ghar may tha ek ujaala
aankhein taras gayi hai...
ali akbar ali akbar...

at jayenge wo gaysoo sab khaak may lahoo may
ye din bhi dekhna thay chehre ki aarzoo may
aankhein taras gayi hai...
ali akbar ali akbar...

phir eid aayi sab ne pehne naye libadein
aaye nahi palat kar ummat ke shaahzade
aankhein taras gayi hai...
ali akbar ali akbar...

khursheed ka wo chehra rangat may tha sunehra
palkon ki chilmano par tha abru'on ka pehra
aankhein taras gayi hai...
ali akbar ali akbar...

sunte hai uska chehra sab khoon may bhar gaya tha
kehte hai uske dil may naiza utar gaya tha
aankhein taras gayi hai...
ali akbar ali akbar...

zainab se hoke ruqsat jab ran ko wo chala tha
har koi badke uske maath ko choomta tha
aankhein taras gayi hai...
ali akbar ali akbar...
Noha - Aankhein Taras Gayi

Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download mp3
Listen Online