عالام و مصائب میں گرفتار ہے صغرا
بیمار ہے صغرا لاچار ہے صغرا
عالام و مصائب میں

سب چھوڑ گئے اماں پھوپھی اور برادر
سوچا نہ کسی نے بھی کہ بیمار ہے اصغر
عالام و مصائب میں

سب بھول گئے جا کے خبر تک نہیں بھیجی
کیا ایسی فرقت کی سزاوار ہے صغرا

ہے وجہ جدائی یہی صحت کی خرابی
اب اپنی ہی بیماری سے بیزار ہے صغرا
عالام و مصائب میں

ملتا ہے سکون دن کو نہ نیند آتی ہے شب کو
اکبر تیری آمد کی طلبگار ہے صغرا
عالام و مصائب میں

کم ہوتی نظر آتی نہیں اشک فشانی
کچھ ایسے حالات سے دوچار ہے صغرا

کرتے ہیں انیس آہ و بکا پڑھ کہ یہ نوحہ
کہنے کی جدائی سے دل افگار ہے صغرا
عالام و مصائب میں


aalamo masaib may giraftar hai sughra
bemaar hai sughra lachaar hai sughra
aalamo masaib....

sab chor gaye amma phuphi aur biradar
socha na kisi ne bhi ke bemaar hai sughra
aalamo masaib....

sab bhool gaye jaake khabar tak nahi bheji
kya aisi furqat ki sazawaar hai sughra
aalamo masaib....

hai wajhe judaai yehi sehat ki kharaabi
ab apni hi bemaari se bazaar hai sughra
aalamo masaib....

milta hai sukoon din ko na neend aati hai shab ko
akbar teri aamad ki talabgaar hai sughra
aalamo masaib....

kam hoti nazar aati nahi ashk fishani
kuch aise hi haalaat se do char hai sughra
aalamo masaib....

karte hai anees aaho buka padke ye noha
kunbe ki judaai se dilafgaar hai sughra
aalamo masaib....
Noha - Aalamo Masaib May
Shayar: Anees Pehersari
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download mp3
Listen Online