آ جائو اب آ جائو اب آ جائو سکینہ
با نو کی صدا تھی کہ نہ تڑ پائو سکینہ

اب مجھ سے جدائی کا عا لم اٹھ نہ سکے گا
یوں روٹھ کے مادر سے نہ تم جائو سکینہ

جس پیا ر سے ماں کہہ کے پکارو میری دلیر
اماں کو نہ اس طر ح سے تڑپائو سکینہ

اصغر کی جدائی علی اکبر کی جدائی
کافی ہے نہ تم بھی مجھے رلوائو سکینہ

کانوں سے لہو بہتا ہے رخسار ہیں نیلے
یہ شکل نہ عباس کو دکھلا ئو سکینہ

لپٹا کے کلیجے سے دُعائیں میری کہنا
اک ننھی سی تربت جو کہیں پائو سکینہ


ajao ab ajao ab ajao sakina
bano ki sada thi ke na tadpao sakina

ab mujh se judai ka alam uth na sakega
yun root ke masdar se na tum jao sakina

jis pyar se maa kehke pukaro meri dilbar
amma ko na is tarha se tadpao sakina

asghar ki judai ali akbar ki judai
kafi hai na tum bhi mujhe rulwao sakina

kaano se lahoo behta hai ruqsaar hai neele
ye shakl na abbas ko dikhlao sakina

lipta ke kaleje se duayein meri kehna
ek nanhi si turbat jo kahin pao sakina
Noha - Aajao Sakina Ab

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online