آج بھی زینب کی آتی ہے صدا بھائی حسین
تیرا چہرہ تیری آنکھیں بھول کب پائی حسین

چلتے ناقہ سے گرایا خدُکو جلتی ریت پر
گھٹنیوںکے بل میں تیری لاش تک آئی حسین

بس میں گھبرائی تھی خنجر تجھ پہ چلتا دیکھ کر
پھر کسی مشکل میں گِھر کر میں نہ گھبرائی حسین

کون تھا جو مرنے والو میں نہیں تھا خوب رُو
بھولنے بیٹھی تو کس کس کی نہ یاد آئی حسین

بہرہے تھے آنکھ سے آنسو تیری رخصت کے وقت
پھر کوئی آنسو نہ ٹپکا آنکھ پتھرائی حسین

ہاتھ میں کوزے لئے سب آسماں تکتے رہے
ابر نے اک بوند پانی کی نہ برسائی حسین

دُور اُفتادہ سفر سے لوٹ کر میں نے نوید
ٹھنڈا پانی جب پیا بس تیری یاد آئی حسین


aaj bhi zainab ki aati hai sada bhai hussain
tera chehra teri aankhein bhool kab payi hussain

chalte naaqe se giraya khud ko jalti rayt par
ghutniyo ke bal mai teri laash tak aayi hussain

bas mai ghabrayi thi khanjar tujhpe chalta dekh kar
phit kisi mushkil may ghir kar mai na ghabrayi hussain

kaun tha jo marne walon may nahi tha khubaru
bhoolne baithi to kis kis ki na yaad aayi hussain

beh rahe thay aankh se aansu teri ruqsat ke waqt
phir koi aansu na tapka aankh pathrayi hussain

haath may kooze liye sab aasman takte rahe
abr ne ek boodh pani ki na barsayi hussain

door uftada safar se laut kar maine naved
thanda pani jab piya bas teri yaad aayi hussain
Noha - Aaj Bhi Zainab
Shayar: Ahmed Naved
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online