آ رہی ہے یہ صدا زینبِ دلگیر کی
لاش بے گوروکفن ہے دشت میں شبیر کی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔

اب نہیں عباسِ غازی قاسم و اکبر کہاں
ہائے اب کوئی اُٹھائے لاش بے تقسیر کی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔

کر دیا قرآن زخمی حُرملا کے تیر نے
جانتے نہ تھے مسلماں عظمتیں بے شیر کی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔

آ گئی اُمت نبی کی آگ لے کر ہاتھ میں
لاج رکھ لینا خُدایا چادرِ تطہیرکی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔  

سر دیا گُلزار جب اسلام پر شبیر نے
خون کے قطروں نے پھر خاکِ شفائ اکسیر کی
آ رہی ہے ۔۔۔۔۔


aa rahi hai ye sada zainabe dilgeer ki
laash be-goro kafan hai dasht may shabbir ki
aa rahi hai....

ab nahi abbas-e-ghazi qasim-o-akbar kahan
haaye ab koi uthaye laash be-takseer ki
aa rahi hai....

kardiya quran zaqmi hurmala ke teer ne
jaante na thay muasalman azmate baysheer ki
aa rahi hai....

aagayi ummat nabi ki aag lekar haat may
laaj rakhlena na khudaya chaadare tatheer ki
aa rahi hai....

sar diya gulzaar jab islam par shabbir ne
khoon ke khatron ne phir khaake shafa akseer ki
aa rahi hai....
Noha - Aa Rahi Hai Ye Sada
Shayar: Gulzaar
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online