آ اصغر آ جا آ اصغر آ جا
کچھ تو بولو آ نکھیں کھولو اصغر بہن بُلاتی ہے
کُوزہ لے کر ہاتھوں میں وہ تُجھ کو ڈھونڈنے جاتی ہے

پانی جب پایا پیاسوں نے اے لال کلیجہ تھام لیا
تیری ہمشیر سکینہ نے یہ کہہ کر تیرا نام لیا
اے میری جان رَن سے آ ئو اصغر بہن بُلاتی ہے
کچھ تو بولو ۔۔۔۔۔

پانی نہ ملا اے لال تجھے اور تیر سے تیری پیاس بُجھی
معصوم سکینہ ہاتھوں میں مشکیزہ لے کر کہتی تھی
میرے پیاسے پانی پی لو اصغر بہن بُلاتی ہے
کچھ تو بولو ۔۔۔۔۔

پانی میںتیرا چہرا اُس کو آ تا ہے نظر وہ روتی ہے
پھیلائے عبا کے دامن کو ہمشیر فُغاں یہ کرتی ہے
میں پریشاں ہوں صدا دو اصغر بہن بُلاتی ہے
کچھ تو بولو ۔۔۔۔۔

پانی اور مشک میرے بچے منسوب ہوئے دونوں تُجھ سے
کہتی ہے بہن وہ تشنہ دہن سوتا ہے خفا ہو کر مجھ سے
کیوں خفا ہو کچھ بتا دو اصغر بہن بُلاتی ہے
کچھ تو بولو ۔۔۔۔۔

پانی بن کر یہ خونِ جگر آ نکھون سے تیری فُرقت میں بہا
دُوری میں تیری مر جائوں گی رو رو کے بہن دیتی ہے صدا
لوٹ آئو لوٹ آئو اصغر بہن بُلاتی ہے
کچھ تو بولو ۔۔۔۔۔

پانی پہ نظر جب جاتی ہے بس پیاس تیری یاد آتی ہے
تلوار کی طرح یاد تیری دل ٹُکرے میرا کر جاتی ہے
آ بھی جائو آ بھی جائو اصغر بہن بُلاتی ہے
کچھ تو بولو ۔۔۔۔۔

پانی کی جگہ تُربت کو تیری اشکوں سے بھیگویا بابا نے
پھولون کی ردا جب مل نہ سکی نوحہ یہ کیا اُس دُکھیا نے
نہ سکینہ کو رُلائو اصغر بہن بُلاتی ہے
کچھ تو بولو ۔۔۔۔۔

پانی پانی کی ایک صدا دیتے تھے سبھی پر تم کو نہیں
اب پانی ملا اطفال میرے پی لیں گے ابھی پر تم کو نہیں
اس لیے تو دیکھو تم کو اصغر بہن بُلاتی ہے
کچھ تو بولو ۔۔۔۔۔

پانی جو پیئو اے اہلِ اعزا پیاسوںکی مصیبت یاد کرو
عرفان اور مظہر دُنیا کو اور اصغر کو پیغام یہ دو
قید خانے میں بھی تم کو اصغر بہن بُلاتی ہے
کچھ تو بولو ۔۔۔۔۔


aa asghar aaja aa asghar aaja
kuch to bolo aankhein kholo asghar behan bulati hai
kooza lekar haaton may wo tujhko dhoodne jaati hai

pani jab paaya pyason ne ay laal kalayja thaam liya
teri hamsheer sakina ne yeh kehkar tera naam liya
ay meri jaan ran se aao asghar behan bulati hai
kuch to bolo....

paani na mila ay laal tujhe aur teer se teri pyas bujhi
masoom sakina haaton may mashkiza lekar kehti thi
mere pyase pani peelo asghar behan bulati hai
kuch to bolo....

paani me tera chehra usko aata hai nazar wo roti hai
phailaaye abaa ke daaman ko hamsheer fughaan ye karti hai
mai pareshan hoo sada do asghar behan bulati hai
kuch to bolo....

pani aur mashk mere bache mansoob huye dono tujhse
kehti hai behan wo tashnadahan sota hai khafa hokar mujhse
kyun khafa ho kuch batado asghar behan bulati hai
kuch to bolo....

pani bankar ye khoon-e-jigar aankhon se teri furqat may baha
boori may teri marjaungi ro ro ke behan deti hai sada
laut aao laut aao asghar behan bulati hai
kuch to bolo....

pani pe nazar jab jaati hai bas pyas teri yaad aati hai
talwaar ki tarha yaad teri dil tukde mera kar jaati hai
aa bhi jaao aa bhi jaao asghar behan bulati hai
kuch to bolo....

paai ki jagah turbat ko teri ashkon se bhigoya baba ne
phoolon ki rida jab mil na saki nowha ye kiya us dukhya ne
na sakina ko rulao asghar behan bulati hai
kuch to bolo....

pani pani ki ek sada dete thay sabhi par tum to nahi
ab pani mila atfaal mere pilenge abhi par tum to nahi
isliye to dekho tumko asghar behan bulati hai
kuch to bolo....

pani jo piyo ay ehle aza pyason ki musibath yaad karo
irfan aur mazhar dunya ko aur asghar ko paighaam ye do
qaid-khane may bhi tumko asghar behan bulati hai
kuch to bolo....
Noha - Aa Asghar Aaja
Shayar: Mazhar Abidi
Nohaqan: Irfan Haider
Download Mp3
Listen Online